29

ﺩﻧﯿﺎ ﮐﯽ ﭘﺎﻧﭻ ﮨﺰﺍﺭ ﺳﺎﻟﮧ ﺗﺎﺭﯾﺦ ﻣﯿﮟ ﺍﯾﮏ ﺑﮭﯽ ﻗﻮﻡ ﺍﯾﺴﯽ ﻧﮩﯿﮟ ﺟﺲ ﻧﮯ ﮐﺴﯽ ﺩﻭﺳﺮﯼ ﺯﺑﺎﻥ ﻣﯿﮟ ﺗﺮﻗﯽ ﮐﯽ ھﻮ

تحریر آر۔اے۔ چشتی۔ ﺩﻧﯿﺎ ﮐﯽ ﭘﺎﻧﭻ ﮨﺰﺍﺭ ﺳﺎﻟﮧ ﺗﺎﺭﯾﺦ ﻣﯿﮟ ﺍﯾﮏ ﺑﮭﯽ ﻗﻮﻡ ﺍﯾﺴﯽ ﻧﮩﯿﮟ ﺟﺲ ﻧﮯ ﮐﺴﯽ ﺩﻭﺳﺮﯼ ﺯﺑﺎﻥ ﻣﯿﮟ ﺗﺮﻗﯽ ﮐﯽ ھﻮ۔
ﺍﺳﺮﺍﺋﯿﻞ کا ان ملکوں میں شمار ھوتا ھے جس میں کسی کو بھی
ﺍﻧﮕﺮﯾﺰﯼ ﻧﮩﯿﮟ ﺁﺗﯽ۔
ﮐﻢ ﻣﺪﺕ ﻣﯿﮟ ﺍﻧﺘﮩﺎﺋﯽ ﺗﺮﻗﯽ ﮐﺮﻧﮯ ﻭﺍﻻ ﻣﻠﮏ ﺟﺮﻣﻨﯽ ۔
ﺟﺮﻣﻨﯽ ﻣﯿﮟ ﻟﻮﮒ ﺍﻧﮕﺮﯾﺰﯼ کو ناپسند ﮐﺮﺗﮯ ﮨﯿﮟ۔
ﺩﻧﯿﺎﺋﮯ ﺍﺳﻼﻡ ﮐﺎ ﺗﺮﻗﯽ ﯾﺎﻓﺘﮧ ﻣﻠﮏ اسوقت ﺗﺮﮐﯽ کہلاتا ھے
جس ﻣﯿﮟ ﺍﺳﺘﺎﺩ ﺳﮯ ﻟﮯ ﮐﺮ تمام عہدوں پر تعینات علی١ احکام , ﺳﺎﺋﻨﺴﺪﺍﻥ ﺳﮯ لیکر ﺳﺎﺭﺍ عدالتی ﻧﻈﺎﻡ ﺗﺮﮎ ﺯﺑﺎﻥ ﻣﯿﮟ ﮬﮯ۔
ﭼﯿﻦ ﻣﯿﮟ ﺁﭖ ﮐﻮ ﮐﻮﺋﯽ ﺳﺮﮐﺎﺭﯼ ﯾﺎ ﻧﺠﯽ ﻋﮩﺪﮦ ﺩﺍﺭ ﺍﻧﮕﺮﯾﺰﯼ ﺯﺑﺎﻥ ﺑﻮﻟﺘﺎ ﻧﻈﺮ نہں
آے گا۔ ﺍﻧﮉﯾﺎ ﺟﯿﺴﺎ ﻗﺪﺍﻣﺖ ﭘﺴﻨﺪ ﻣﻠﮏ ﺍﻗﻮﺍﻡ ﻣﺘﺤﺪﮦ ﻣﯿﮟ ﺑﮭﯽ ﺁﭖ ﮐﻮ اپنی قومی زبان ھندی میں ﺑﻮﻟﺘﺎ ﻧﻈﺮ ﺁﺋﮯ ﮔﺎ۔
ﺍﯾﺮﺍﻥ ﮐﺎ ﺗﻤﺎﻡ ﺳﺮﮐﺎﺭﯼ ﻧﻈﺎﻡ ﻓﺎﺭﺳﯽ ﻣﯿﮟ ﺗﺮﺗﯿﺐ ﺩﯾا ﮔیاھے
ﺍﻭﺭ ﺍﯾﺮﺍﻥ ﺳﮯ ﮨﺮ ﺳﺎﻝ ﻧﻮﺑﻞ ﺍﻧﻌﺎﻡ ﮐﮯ ﻟﯿﮯ ﮐﻮﺋﯽ ﻧﺎ ﮐﻮﺋﯽ ﻧﺎﻣﺰﺩ ﮨﻮﺗﺎ ﮬﮯ۔ سمجھ نہں
آتی ھہں ﮐﺲ ﻧﮯ ﮨﻤﺎﺭﮮ ﺩﻣﺎﻍ ﻣﯿﮟ یہ بات ڈال ﺩی ھے ﮐﮧ ھﻢ ﺍﻧﮕﺮﯾﺰﯼ ﮐﮯ ﺑﻐﯿﺮ ﺗﺮﻗﯽ ﻧﮩﯿﮟ ﮐﺮ ﺳﮑﺘﮯ۔
ﻋﺠﯿﺐ بات ﮬﮯ ﮐﮧ ﺍﺭﺩﻭ ﺍﺩﺏ ﮐﯽ ﺗﺎﺭﯾﺦ ﮨﺰﺍﺭ ﺳﺎﻟﮧ ﭘﺮﺍﻧﯽ ﮬﮯ۔
ﺍﻭﺭ ﺍﻧﮕﺮﯾﺰﯼ ﺍﺩﺏ ﺁﭖ ﮐﻮ ﺗﯿﻦ ﺳﻮ ﺳﺎﻝ ﺳﮯ ﭘﮩﻠﮯ ﻧﻈﺮ ﻧﮩﯿﮟ ﺁتا اب وقت آ گیا ھے کہ
ﮨﻤﯿﮟ ﺍﭘﻨﯽ ﺯﺑﺎﻥ ﮐﻮ ﺍﮨﻤﯿﺖ ﺩﯾﻨﯽ ﮨﻮﮔﯽ۔
ﺍﮔﺮ ﺩﻧﯿﺎ ﻣﯿﮟ ﻧﺎﻡ ﺑﻨﺎﻧﺎ ﮬﮯ ﺗﻮ۔
ﺳﺎﺭﯼ ﺩﻧﯿﺎ ﺗﺮﻗﯽ ﮐﺮﮔﺌﯽ ﺍﭘﻨﯽ ﺯﺑﺎنوں ﮐﯽ ﺑﺪﻭﻟﺖ
ھﻢ ﻧﮯ ﺁﺩﮬﯽ ﻋﻤﺮ ﮔﻨﻮﺍ ﺩﯼ ﺍﻧﮕﺮﯾﺰﯼ زبان سیکھتے سیکھتے اور اب ھم صیح طریقے سے نہ اردو سیکھ سکے اور نہ انگریزی۔ حالانکہ سپریم کورٹ آف پاکستان کے ایک معزز جج سابق چیف جسٹس جواد ایس خواجہ صاحب کا وہ تاریخ ساز فیصلہ بھی اردو زبان کے بارے میں دیا جا چکا ھے جسکے مطابق تمام سرکاری خط کتابت اردو زبان میں کی جاے۔ اس پر عمل درآمد کی ذمداری حکومتوں کی ھوتی ھے جو اسوقت تک بدقسمتی سے اس اھم فیصلے پر عمل در آمد کرنے میں قاصر ھہں۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں